ملک میں تعلیم کی حالت بد کی کہانی واسو کی زبانی


کسی بھی ملک یا قوم کی ترقی یا معیار کا اندازہ اس ملک یا قوم کی تعلیم و صحت سے لایا جا سکتا ہے۔ پاکستان کا معاملپ کچھ یوں ہے کہ یہاں انہی دو شعبہ جات کو بالکل بھی خاطر میں نہیں لایا جاتا۔ حد یہ ہے کہ تعلیم کے لئے آئین کی 25 اے شک تو موجود ہے جو ریاست کو اس چیز کی زمہ دار ٹھہراتی ہے کہ سولہ سال کی عمر تک کے بچوں کی تعلیم کا بندوبست کرے۔ کتابی بات ہے بھائی ہم کیوں مانیں ہمارے ہاں رہاست ک چلانے والی سرکار غالباً صرف انہی قوانین میں دلچسپی رکھتی ہے کہ جن سے ان کی حکومت و طاقت کو دوام ملتا ہے باقی رہے نام مولا کا۔ 

ذیر نظر ویڈیو میں مقبول فنکار واسو ملک میں تعلیم کی حالت خستہ اپنے ہی انداز میں بیان کر رہے ہیں، سنیئے اور سوچیئے کہ ہمارے ساتھ سیاست کے نام پر کیا کیا شغل کھیلا جاتا ہے۔

Advertisements

Leave a comment

Filed under سوچ بچار

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s