اٹھ کہ اب بزم جہان کا اور ہی انداز ہے

آخر کار تقریباًدو ماہ کی سوچ بچار کے بعد، اور اگلے جمہ کی ٹالمٹول کے بعد آج یہ بلاگ شروع ہو رہا ہے. کوئی لمبی چوڑی امیدیں اس سے وابستہ نہیں کی کیوں کہ  لمبی امیدیں باندھنا بیوقوفی ہوا کرتی ہے. ارادہ صرف اس زبان ک لیۓ کچھ کرنے کا ہے جو معدوم ہوتی جا رہی ہے، اردو سے جو جذباتی لگاؤ ہے اس نے ہے اس بلاگ کو شروع کرنے پر اکسایا انٹرنیٹ پر جہاں ہر چیز پر معلومات کی بھرمار ہے وہیں اردو میں موجود معلومات کے حصول میں ہونے والی دشواری ایک بہت بڑھی وجہ بنی اس کاوش کی. شاید میری کچھ محنت سے کسی اور کا وقت بچ جاۓ لیکن یہ پھر ایک لمبی امید ہے جو ابھی سے رکھنا خام خیالی ہی ہوگی. آج کا دن ور سحری کے بعد کا وقت رکھنے کی وجہ اس وقت میں سمٹی ہی برکات سے کچھ حصہ لینا اور آج کے دیں جب وطن عزیز وجود میں آیا تو اس آغاز کا اس سے بہتر موقع اور کوئی نہ لگا.
ملک و قوم کے لیۓ آزادی کا ایک اور سال مکمل کرنے کی مبارکباد کے ساتھ کچھ دعاوں سے بھرے جذبات ہیں ک اس ملک کو وہ  مقام مل جاۓ کہ جس  کے لیۓ یہ حاصل کیا گیا تھا. ان تمام لوگوں کی عظمت کو سلام جنہوں نے یہ ملک بنا کار دیا اور وہ جنہوں نے اپنا سب کچھ دے کار اس ملک کو چلایا. ابھی بہت سی منزلیں عبور کرنی ہیں اور اس کے لیۓ بہت سے امتحانات آنے ہیں اور اچھا نتیجہ بھی ہمیشہ اچھے امتحان کا ہے نکلا کرتا ہے.
اس موقع اور آخری چند سطور کو میں مبارکباد کے لیۓ استمال کرنا چاہوں گا. عابد بیلی اور ان کے ساتھ یقینن داد کے مستحق ہیں کے جنہوں نے پریشان حل قوم کو خوش ہونے کا ایک اور موقع دیا. انہی کوششوں ک نتیجے میں آج پاکستان نے ایک علمی ریکارڈ حاصل کیا ہے “سب سے زیادہ لوگوں کا ایک ساتھ قومی ترانہ گنے کا ریکارڈ”. شکرگزار ہوں ان تمام ٥٨٨٤ لوگوں کا ککے جنہوں نہیں مل کار یہ اعزاز حاصل کیا. یقینن ان ٨٠ سیکنڈز میں ہر کوئی پاکستانی تھا نہ کا صوبائیت اور لسانیت کی بنیاد پر بٹا ہوا شہری.
گوگل پاکستان کا بھی شکریہ کہ جس نے گوگل ڈوڈل کی شکل میں پاکستان کو یوم آزادی کا تحفہ دیا. ابھی تو یہ ڈوڈل صرف گوگل پاکستان پر دیکھا جا سکتا ہے لیکن امید ہے کہ دوپہر ١٢ کے بعد پاکستان سے بھر بھی دیکھا جا سکے گا.
آخر میں شکریہ ان تمام لوگوں کا جنہوں نے یہ بلاگ شروع کرنے میں مدد دی اس طویل فہرست میں میرے تمام پسندیدہ اردو بلاگرز آتے ہیں کے جن کے کام سے متاثر ہو کار راۓ نامہ کی شروعات کی جا رہی ہے. خاص طور پر شکریہ ادا کرنا چاہوں گا دوست فہد (ابو شامل) کا جنہوں نے کافی رہنمائی کی، اور اپنے پردیسی بھی جبران رفیق کا کہ جنہوں نے اردو رسم الخط کے حصول کا ذریعہ بتایا.

Advertisements

5 Comments

Filed under سوچ بچار

5 responses to “اٹھ کہ اب بزم جہان کا اور ہی انداز ہے

  1. بہت اچھی کوشش ہے۔ امید ہے اس سے بہت سے لوگوں کو فائدہ پہنچے گا۔

  2. اذلان اردو بلاگ شروع کرنے پر ڈھیروں مبارک باد۔

  3. govdotedu

    سب سے پہلے تو جشنِ آزادی مبارک ہو پھر ٓاپ کو اننا اچھا بلاگ شروع کرنے پر بھی مبارک باد۔ واقعی اس وقت جہاں ڈھیر سارے محازوں پر کام کرنے کی ضرورت ہے وہی اردو کی تریج کے لیے بھی ہیمں کام کرنا ہوگا۔ ہاں پاکستان کے ان نوجوانوں کو عالمی ریکارڈ بنانے پر بھی مبارک باد۔

  4. 14 اگست کی سب سے بڑی خوشخبری 🙂 زبردست ازلان۔ امید ہے کہ یہ سلسلہ چلتا رہے گا۔ آپ کو بلاگ مزید بنانے کے لیے جس مدد کی بھی ضرورت ہو آپ مجھ سے پوچھیے گا۔ میں خود نہ کر سکا تو کسی کے ذریعے کروا دوں گا۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s