For How Long I’ve To Stay Like This?

غم ہجراں یار کب تک؟ رہوں بے قرار کب تک؟

میرے دل یہ بتا مجھ کو کروں اسکو پیات کب تک؟

یہ ہجوم نامرادی غم بےشمار کب تک؟

شب ہجر کی اداسی کہین مجھے لے نہ ڈوبے

میری دھڑکنوں سے ہو گا تیرا انتظار کب تک؟

نہ ہے آج کا بھروسہ نہ ہی کل کی ہیں امیدیں

تیری راہ گزر کو دیکھوں شب وصل یار کب تک؟

میں نکل پڑا تھا تنہا لئے سارے رنج دل پر

لیکن پھر یہ آیا خیال کہ سہوں بار بار کب تک؟

میری آنکھیں تک رہی ہیں تیری واپسی کی راہیں

تو ہی بتا مجھ کو کروں انتظار کب تک

مجھے یوں تو دے گئی ہے دلاسا جاتے جاتے

مگر اب یہ سوچتا ہوں کروں اعتبار کب تک

Advertisements

Leave a comment

Filed under Urdu Poetry

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s